ملک میں چینی کا بحران پیدا ہونے کا خدشہ

کراچی (نیوز ڈیسک ) ملک میں چینی کا بحران پیدا ہونے کا خدشہ، اضافی چینی کی فوری برآمد کی اجازت نہ ملنے پر شوگر ملز ایسو سی ایشن سندھ زون کا آئندہ کرشنگ سیزن شروع نہ کرنے کا عندیہ۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان شوگر ملز ایسو سی ایشن سندھ زون نے حکومت سے فالتو چینی فوری برآمد کرنے کا مطالبہ کر دیا۔ایسوسی ایشن نے کہا ہے کہ پچھلے کرشنگ سیزن میں شوگرملوں نے ریکارڈ 8ملین ٹن چینی بنائی، 6ملین ٹن ملکی کھپت کے بعد 2 ملین ٹن چینی اضافی پڑی ہے۔برآمد کی اجازت نہ ملنے پر پاکستان شوگر ملز ایسوسی ایشن (سندھ زون)نے آئندہ کرشنگ سیزن شروع نہ کرنے کا عندیہ دیا ہے۔

ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ رواں سال گنے کی کاشت 10فیصد زیادہ ہوئی ہے ۔حالیہ بارشوں کی وجہ سے گنے کی بہتر پیداوار ہونے کا امکان ہے، حکومت نے فی الفور فالتو چینی برآمد کرنے کا فیصلہ نہ کیاتو اس کا منفی اثر کاشتکار، شوگر انڈسٹری پر پڑے گا۔انہوں نے کہا کہ وزیرِاعظم سے اپیل ہے کہ فالتو چینی کی فوری برآمد کیلئے متعلقہ حکام کو احکامات صادر فرمائیں۔ اس حوالے سے کچھ روز قبل ترجمان پاکستان شوگرانڈسٹری ایسوسی ایشن کا بھی اہم بیان سامنے آیا تھا۔ جیو نیوز کے مطابق ترجمان پاکستان شوگرانڈسٹری ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ ایف بی آر کے مطابق اگلے کرشنگ سیزن کے آغاز تک 12 لاکھ ٹن فاضل چینی موجود ہوگی، گزشتہ کرشنگ سیزن میں شوگر ملز نے 20 لاکھ ٹن فالتو چینی بنائی۔ان کا کہنا ہے کہ اس بار گنے کی کاشت 20 لاکھ ٹن زیادہ ہوئی ہے، مون سون کی زیادہ بارشوں کی وجہ سے گنے کی بہتر پیداوار ہونے کا امکان ہے، آئندہ سیزن 15، 20 لاکھ ٹن اضافی چینی پیدا ہوگی۔حکومت نے فالتو چینی اگر برآمد کرنے کا فیصلہ نہ کیا تو اس کا اثر شوگر انڈسٹری اور کاشتکار پر پڑے گا۔